Pakistan News

حکومت نے کہا ہے کہ وزارت تحفظ ماحولیات کی پیشگی منظوری کے بعد راولپنڈی اسلام آباد میٹرو بس منصوبے پر کام کا آغاز کیا گیا ہے جسے اس سال

کے آخر تک مکمل کر لیا جائےگا۔

یہ بات وفاقی وزیر شیخ آفتاب نے بدھ کو قومی اسمبلی میں حزب اختلاف کی جانب سے توجہ دلاؤ نوٹس کے جواب میں کہی۔

خاتون رکن ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے کہا کہ میٹرو بس منصوبے سے اسلام آباد کے قدرتی ماحول کو خطرہ لاحق ہے اور حکومت نے تحفظ ماحولیات پاکستان سے اجازت لیے بغیر اس منصوبے پر کام شروع کیا ہے۔

جواب میں وفاقی وزیر شیخ آفتاب نے کہا کہ اس منصوبے کا مقصد دونوں شہروں کے غریب عوام کو ٹرانسپورٹ کی بہتر سہولت فراہم کرنا ہے۔

انھوں نے کہا کہ منصوبے سے بڑی گاڑی والوں کو کوئی فائدہ نہیں ہے شاہد یہی وجہ ہے کہ اس عوامی منصوبے کی مخالفت کی جا رہی ہے جبکہ اس سے ان لوگوں کوفائدہ ہوگا جو آج بھی ایک جگہ سے دوسرے شہر جانے کے لیے چار یا پانچ مقامات پر پبلک ٹرانسپورٹ (بسوں اور ویگنوں ) میں دھکے کھانے پر مجبور ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ تین مئی کو اسلام آباد کنونشن سینٹر میں ایک سیمینار منعقد ہوا جس میں تحفظ ماحولیات پاکستان کے ماہرین نے شرکت کی اور انہوں نے تصدیق کی کہ میٹرو بس منصوبے سے اسلام آباد کا قدرتی حُسن اور ماحول زیادہ متاثر نہیں ہوگا۔ بعد میں محکمۂ تحفظ ماحولیات نے کام شروع کرنے کے لیے (این او سی) بھی جاری کیا۔

لیکن ڈاکٹرنفیسہ شاہ کا کہنا تھا کہ 40 ارب روپے کی خطیر رقم اس منصوبے پر خرچ کی جا رہی ہے۔ جبکہ لاہور کے ایک کروڑ کے مقابلے میں راولپنڈی اور اسلام آباد کی کل آبادی 22 لاکھ سے بھی کم ہے۔

انھوں نے الزام لگایا کہ یہ منصوبہ کیپیٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی(سی ڈی اے) اسلام آباد کو دینے کی بجائے صوبہ پنجاب حکومت کے زیر انتظام راولپنڈی ڈویلپمینٹ اتھارٹی کو اس لیے دیاگیا کیونکہ وہاں وزیراعظم کے بھائی میاں شہباز شریف کی حکومت ہے۔

وفاقی وزیرآفتاب شیخ نے کہا کہ حزب اختلاف کی جماعتیں موجودہ حکومت کی ترقیاتی منصوبوں سے خوفزدہ ہیں کیونکہ انھیں خوف ہے کہ اگر یہ منصوبے بروقت مکمل ہوئے تو آئندہ پانچ سال کے لیے ایک بار پھر نوازشریف کی قیادت میں حکومت بن جائےگی۔

انھوں نےکہا کہ حزب اختلاف کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ موجودہ حکومت میٹرو بس سمیت کراچی لاہور موٹروے، گوادر لِنک روڈ سمیت بہت سارے ترقیاتی منصوبے آئندہ چار سال میں مکمل کر کے دے گی۔

اس دوران پیپلز پارٹی کے ایک اور رکن اعجاز جھلکرانی نے کہا کہ منصوبے کے دوران اسلام آباد میں سات ہزار درخت کاٹنے کاخطرہ ہے جس کے بارے میں متعلقہ محکمے نے حکومت سے اس سلسلے میں بارہ وضاحتیں طلب کر رکھی ہیں لیکن حکومت نے تاحال کسی ایک کا جواب نہیں دیاہے۔

سابق وفاقی وزیر قدرتی وسائل نوید قمر نےاس موقع پر کہا کہ سویڈن کی ایک تعمیراتی کمپنی نے 25 فیصد کم قیمت میں بسیں فراہم کرنے کی پیشکش کی تھی۔ لیکن حکومت پنجاب نےدوستی نبھاتے ہوئے بسوں کی خریداری ترکی کی ایک اور کمپنی کے حوالے کر دی ہے۔

جبکہ قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے خوشگوار انداز میں کہا کہ منصوے میں جو لوہا استعمال ہو رہا ہے وہ تو لوہا ہے چاہے وہ سٹیل مل سے خریدا گیا ہو یا اتفاق فاؤنڈری سے لایاگیا ہو۔اس طرح ملک کے کارخانے بھی چلانے ہیں۔


کراچی : مایا ناز بلے باز اور آل راؤنڈر شاہد خان آفریدی نے کراچی میں سابق صدر پرویز مشرف سے ملاقات کی۔ 

آل راؤنڈر شاہد آفریدی سابق صدر پرویز مشرف سے ملاقات کیلئے زمزمہ میں واقع ان کی رہائش گاہ گئے، جہاں انہوں نے سابق صدر پرویز مشرف کی خیریت دریافت کی، شاہد آفریدی نے سابق صدر مشرف کی علیل والدہ کی بھی خیریت دریافت کی۔ 

اس موقع پر اسٹار کرکٹر کا کہنا تھا کہ سابق صدر مشرف کی رہائش گاہ آمد اور ملاقات کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں، سابق صدر سے ملاقات خالصتاً ایک غیر رسمی ملاقات تھی، انہوں نے کہا کہ ملاقات میں مشرف صاحب کی عیادت بھی کی اور ان کی والدہ کی خیریت دریافت کی۔ اس موقع پر سابق صدر مشرف نے اسٹار آل راؤنڈر کی حالیہ شاندار پرفارمنس کو بھی سراہا۔ سماء

کراچی: سندھ اسمبلی نے کم عمر بچوں کی شادی کے خلاف بل منظور کرلیا ہے جس کے بعد شادی کی کم سے کم عمر اٹھارہ ہوگئی ہے۔

ڈان نیوز کے مطابق کم عمر لڑکی سے شادی کرنے والے مرد اور اس کے والدین کو تین سال قید اور جرمانہ کیا جائے گا۔

اراکین اسمبلی کا کہنا تھا کہ بل پاس ہونا خوش آئند ہے مگر عملدرآمد میں وقت درکار ہوگا ۔

سندھ اسمبلی میں منظور کیے جانے والے بل کے مطابق شادی کی کم سے کم عمر اٹھارہ سال ہونی چاہئیے۔

اس بل کو پہلی مرتبہ شرمیلا فاروقی اور روبینہ قائمخانی نے 2013 میں پیش کیا تھا۔

ISLAMABAD: The special court on Monday allowed lawyers of former military ruler Gen (retd) Pervez Musharraf to withdraw their request related to Section 6 of the Special Court Act of 1976 in the treason case against him, DawnNews reported.

A three-judge bench, headed by Justice Faisal Arab, was hearing the case against the former army strongman.

During the hearing, Musharraf’s counsel Farogh Naseem presented his arguments in the court and said Musharraf wanted to withdraw the written application submitted in relation to section 6 of the Special Court Act of 1976 and wanted to present its reservations orally in this regard.

He added that section 6 of the Special Court Act of 1976 had been expunged.

Chief Prosecutor Akram Sheikh said that on one hand the withdrawal of the application was sought while on the other, Naseem was presenting his arguments over it.

Justice Arab remarked that the decision to return the application was to be taken by the court and a conditional request was not acceptable.

Naseem said the decisions in relation to the FIA report were very important for him, adding that he would devise a future strategy in light of the investigative agency.

He moreover said that under the ordinance of 1981, the amendment to include section 6- 1(a) had been removed.

Subsequently, Justice Arab said Anwar Mansoor had spent half an hour contending over the application that Naseem wanted to withdraw.

The court allowed the defence team to withdraw the said application and said the decision to hand over the report of the FIA to defence attorneys, which was reserved earlier on April 24, would be taken on May 8.

LAHORE: Government of Punjab is holding an Overseas Pakistanis Convention on 28th April in Lahore in which more than 250 Overseas Pakistanis from different countries will interact with the Chief Minister Punjab Mian Shehabz Sharif. CM will announce the establishment of Overseas Pakistanis Commissioner Punjab (OPCP) which aims at addressing the issues/concerns of overseas Pakistanis related to Punjab govt. 

Event Date: April 28, 2014 
Time: Starts at 12:00 PM

Live Coverage

 


Overseas Pakistanis Commissioner Punjab (OPCP) by GeoNews

 

راولپنڈی (مانیٹرنگ ڈیسک )پاکستان نے حتف تھری غزنوی بیلسٹک میزائل کا کامیاب تجربہ کر لیا ۔پاک فوج کے محکمہ تعلقات عامہ ( آئی ایس پی آر) کے مطابق میزائل زمین سے زمین مار کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے اور 290 کلومیٹر تک نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتاہے ۔ترجمان کے مطابق  حتف تھری ایٹمی وار ہیڈ اور روایتی ہتھیار لے جانے کی صلاحیت رکھتا ہے ۔آئی ایس پی آر کے مطابق چیئر مین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی جنرل راشد محمود نے میزائل کے تجربے کا معائنہ کیا، حتف تھری بیلسٹک میزائل کے کامیاب تجربے پر صدر مملکت ممنون حسین، وزیر اعظم نواز شریف اور آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے میزائل کی تیاری میں شامل ماہرین کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ ملک کے دفاع کو ناقابل تسخیر بنانے کے لئے تمام وسائل کو بروئے کار لایا جائے گا۔

KARACHI: A speeding passenger bus smashed into a tractor-trailer in southern Pakistan yesterday, killing 42 people including 14 children and injuring more than a dozen others with many in critical condition, police said. Several passengers were trapped inside the pink bus that was left badly mangled after the high-speed crash in the town of Sukkur, 425 kilometers (266 miles) north of Karachi in the province of Sindh. Excavators were used to pull the tractor-trailer from the bus, as rescuers struggled to pull out the stranded passengers.

One eyewitness said he saw several passengers pleading for help. “They were screaming and shouting: ‘save us, save us’,” he told reporters. Muhammad Faisal, a senior police official, said: “Most of the passengers were trapped between their seats, we rescued them by cutting the bus body with metal cutters.” He said the speeding bus was trying to overtake the tractor-trailer when it veered out of control. The collision was so severe, he added, that 25 passengers died on the spot.

The dead included six members of a 10-member family who were travelling on the bus to visit their relatives in Karachi. “We were ten members of one family. Six of them died,” said 18-year-old Maryam Bibi, weeping. Bibi survived the crash along with her six-year-old brother. The dead included 14 children and 13 women, said Fida Hussain Shah, a senior Sukkur police officer, adding that the bus driver was killed on the spot while the driver of the tractor-trailer sustained serious injuries.

Shah confirmed that over speeding by the bus was the cause of the accident. Most of the 17 injured were in critical condition and several were transferred to a hospital in Karachi after initial treatment in Sukkur. Pakistan has one of the world’s worst records for fatal traffic accidents due to poor roads, badly maintained vehicles and reckless driving. Sixteen people were killed and 49 injured when an overloaded truck crashed into a ravine earlier this month in the central province of Punjab. A collision between two buses and a petrol tanker killed 35 people in southwest Pakistan in late March. —AFP

9.png

login with social account

Images of Kids

Events Gallery

Currency Rate

/images/banners/muzainirate.jpg

 

As of Sat, 17 Nov 2018 12:44:16 GMT

1000 PKR = 2.324 KWD
1 KWD = 430.348 PKR

Al Muzaini Exchange Company

Go to top